khawajah-asif

اتحادی افواج کی سربراہی,میرے پاس تفصیلات نہیں

وزیر دفاع خواجہ محمد آصف نے کہا ہے کہ 7جنوری کی شام کو جنرل(ر) راحیل شریف عمرے سے واپس آگئے تھے ،سعودی حکومت نے اسلامی ممالک کی اتحادی افواج کی سربراہی کے حوالے سے ابھی تک جنرل راحیل سے کوئی رابطہ کیا اور نہ ہی پاکستان حکومت سے کوئی رابطہ کیاگیا ہے ،جب بھی انہیں آفر ہوگی تو وہ متعلقہ ادارے سے رابطہ کریں گے ۔وہ بدھ کو نجی ٹی وی کو انٹرویو دے رہے تھے ۔انہوں نے کہا کہ اسلامی اتحادی افواج کی سربراہی کے حوالے سے ابھی تک یہ مسئلہ اٹھایا نہیں گیا ،میرے پاس اس حوالے سے کوئی تفصیلات نہیں تھیں اس لئے میں نے اپنے گزشتہ انٹرویو میں بھی یہی کہا تھا کہ میرے پاس تفصیلات نہیں ہیں اس لئے اس حوالے سے کوئی حتمی رائے نہیں دے سکتا،7جنوری کی شام کو راحیل شریف عمرے سے واپس آگئے تھے ۔خواجہ آصف نے کہا کہ راحیل شریف کی طرف سے تین شرائط رکھے جانے کے بارے میں بھی میرے پاس کوئی معلومات نہیں ہیں ،مجھے اس بات کا 100فیصد یقین ہے کہ جب بھی سعودی حکومت انہیں یہ عہدہ آفر کرے گی تو وہ متعلقہ ادارے سے باقاعدہ پراسس کے لئے حکومت سے اجازت لیکراس پر عمل کریں گے ۔وزیردفاع نے کہا کہ گزشتہ انٹرویو میں مجھ سے اچانک سوال کیا گیا جس پر میں تیار نہیں تھا اس لئے آج میں نے باقاعدہ تیاری کے ساتھ سینٹ میں اس معاملے پر بیان دیا ہے ،اسلامی اتحادی ممالک میں پاکستان کی شمولیت سے متعلق سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان ابھی اس معاملے پر کلیئر نہیں ہے ،ابھی اس سے متعلق بات کرنا قبل از وقت ہوگا اور اسلامی اتحاد سے متعلق اپنا موقف سینٹ میں پہلے ہی دے چکا ہوں ۔میرے بیان کا کچھ اور مطلب نکالا گیا ،جنرل (ر) امجدشعیب کے بیان پر تبصرہ نہیں کروں گا اورراحیل شریف نے ابھی تک ہم سے کسی معاملے پر کوئی رابطہ نہیں کیا جو ریکارڈ پر تھا وہ سینٹ میں پیش کر دیا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *