download-7

خراٹے زیاد ہ کیوں آتے ہیں

نیویارک(نیوزڈیسک) آپ نے اکثر دیکھا ہوگا کہ کچھ لوگ بہت زیادہ خراٹے لیتے ہیں ،اگر آپ کا ساتھی رات کو سوتے میں خراٹے لیتا ہے تو پھر آپ کے لئے سکون سے سونا نہ ممکن ہوجاتا ہے۔ آئیے آپ کو بتاتے ہیں کہ ہمیں خراٹے کیوں آتے ہیں۔
خراٹے اس وقت زیادہ آنے لگتے ہیں جب ہمارے گلے اور نتھنوں سے ہواآسانی سے نہیں گزرپاتی اور یہ اردگرکے ٹشوز میں حرکت ہوتی ہے اور ان کی گردش کی وجہ سے خراٹوں جیسی آواز پیدا ہوتی ہے۔ سائنسدانوں کا کہناہے کہ جب ہم سوتے ہیں تو ہماری گردن کے پٹھے سکون میں آتے ہیں اور بعض اوقات وہ اس قدر پرسکون ہوجاتے ہیںکہ ہمارے اوپر والی سانس کی نالیں بند ہوجاتی ہیں جس کی وجہ سے ہواکو پھیپھڑوں تک پہنچنے کے لیے جگہ نہ ملنے کی وجہ سے خراٹے آنے لگتے ہیں۔ایسے لوگ جن کے ٹانسلز اور زبان بڑی ہو اور جن کی گردن کے قریب زیادہ وزن ہوتو ایسے لوگوں کو زیادہ خراٹے آتے ہیں۔جن لوگوں کا وزن زیادہ ہوتاہے انہیں بھی زیادہ خراٹے آنے لگتے ہیں۔کچھ لوگ جنہیں زیادہ خراٹے آتے ہیں تھکے رہتے ہیں جس کی وجہ ماہرین صحت یہ بتاتے ہیں کہ خراٹوں کی وجہ سے انہیں پرسکون نیند نہیں آتی اور وہ نیند کے دوران اٹھتے رہتے ہیں اوروہ تھکاوٹ کا شکار رہتے ہیں۔ 10میں سے تین مرد اور دوخواتین خراٹے لیتی ہیں اور یہ صحت مند زندگی کی نشانی نہیں ہے لہذا ڈاکٹر سے مشورہ کریں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *