india-delhi

قومی ترانے پر کھڑے نہ ہونے پرتین افراد گرفتار

بھارت کی ریاست تمل ناڈو کے دارالحکومت چینئی کے بین الاقوامی فلمی میلے کے دوران قومی ترانہ بجنے کے دوران کھڑے نہ ہونے پر تین افراد کو گرفتار کر لیا گیا ۔گرفتار شدگان میں کالج کی ایک طالبہ اور ان کی ماں بھی شامل ہیں۔یہ واقعہ شہر کے ایک مال میں واقع تھیئٹر میں پیش آیا جہاں قانون کی طالبہ شریلا، ان کی ماں اور کیرالہ سے آنے والے بجان کے وندو ایک بلغارین فلم ‘گلوری’ دیکھنے گئے تھے بھارت کی سپریم کورٹ نے گذشتہ ماہ سینما گھروں میں فلم کی ابتدا سے قبل قومی ترانہ بجانے کی ہدایات دیتے ہوئے سبھی کو اس دوران کھڑے ہونے کے احکامات دیے تھے۔بہت سے لوگ عدالت کے اس حکم کو درست نہیں مانتے، اس لیے اس کی مخالفت شروع کی تھی اور شریلا اس کے مخالفین میں سے ایک ہیں۔شریلا کا کہنا تھا کہ ‘ہم پر اعتراض کرنے والے کچھ لوگ مجھ سے اور میری ماں سے تو درخواست کر رہے تھے لیکن ونود کے ساتھ انھوں نے زبردستی کی۔شریلا اور ونود کے مطابق معاملہ اس وقت شروع ہوا جب کچھ لوگوں نے ترانے کے دوران ان کے نہ کھڑے ہونے پر اعتراض کیا جس کے بعد فلمی میلے کا اہتمام کرنے والے کچھ لوگ آئے اور ان سے باہر نکلنے کو کہا گیا۔انھوں نے کہا کہ کچھ دیر بعد تین پولیس اہلکار آئے اور ہم تینوں کو تھانے لے کر گئے لیکن کیس درج کرنے کے بعد انھوں نے ہمیں جانے دیا کیونکہ پولیس نے جس دفعہ کے تحت مقدمہ درج کیا تھا اس میں ہمیں تبھی گرفتار کیا جا سکتا تھا جب ہم دوسرے لوگوں کو کھڑے ہونے سے روکتے۔’شریلا نے بتایا کہ ‘میں اصول کے تحت کھڑی نہیں ہوئی کہ قومی ترانے سے حب الوطنی کا جذبہ نہیں جاگتا۔ مجھے سپریم کورٹ کا حکم ظالمانہ اور سفاکانہ لگتا ہے۔’اس واقعے کے بعد ونود نے بھی بعض ان لوگوں کے خلاف حملہ کرنے کی شکایت درج کروائی جنھوں نے ان کا شناختی کارڈ چھیننے کی کوشش کی اور ان کے ساتھ دھینگا مشتی کی۔