بنیادی صفحہ -> اداریہ،کالم -> ایف بی آر ٹیکس اہداف حاصل کرنے میں ناکام

ایف بی آر ٹیکس اہداف حاصل کرنے میں ناکام

معاشی اور اقتصادی لحاظ سے ملک پہلے ہی بڑے کڑے وقت سے گزر رہا ہے۔ایسے حالات میں فیڈرل بورڈ آف ریونیو کا ٹیکس اہداف حاصل کرنے میں ناکامی کا اعتراف تشویشناک ہے ۔ ایف بی آر کے مطابق مالی سال کے پہلے سات ماہ میں 200 ارب روپے کے ٹیکس شارٹ فال کا سامنا ہے۔ایف بی آر کے ممبر پالیسی اورممبر آپریشن کا کہنا ہے کہ ود ہولڈنگ ٹیکس کی مد میں 552 ارب سے 511 ارب روپے ٹیکس اکٹھا ہواجوکہ گزشتہ عرصہ کی نسبت چھ فیصد کم ہے۔ودہولڈنگ ٹیکسزمیں 40ارب کاشارٹ فال ہے۔ ممبرایف بی آر کا کہنا ہے کہ پراپرٹی سے چھ ماہ میں 12 ارب روپے ٹیکس اکٹھا ہوا جبکہ آئندہ چھ ماہ میں 12 ارب روپے ٹیکس اکٹھا ہونے کا امکان ہے۔اسی طرح فائلر کے بینکوں سے پیسے نکلوانے پرٹیکس ختم کرنے سے 3 ارب روپے کم اکٹھے ہوں گے۔ ممبرایف بی آرنے بتایا کہ ٹیکس نادہندگان کو 6 ہزار کے قریب نوٹسز بھیجے جن سے 2 ارب 60 کروڑ روپے ٹیکس جمع ہوا۔حکومت کو ٹیکس وصولی کے نظام کو بہتر بنانے کی اشد ضرورت ہے ، صرف ایک مخصوص طبقے پر ٹیکسوں کے انبار لگانے سے زیادہ اہم یہ ہے کہ اُن افراد کو بھی اس سرکل میں لایا جائے تو ٹیکس چوری کیلئے رائیں تلاش کرتے رہے ہیں ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*