بنیادی صفحہ -> اداریہ،کالم -> گونگے کہیں کے؟

گونگے کہیں کے؟

گونگے کہیں کے؟
ایم سرور صدیقی
کاش کوئی ان حکمرانوں کو سمجھائے کہ گھر کے برتن فروخت کرکے کبھی گذارا نہیں ہوتا معاملات میں خودکفیل ہوناپڑتاہے۔ محض خالی باتیں اور کھوکھلے دعوے کرنا الگ بات ہے لیکن ملکی ترقی اور خوشحالی کیلئے ٹھوس اقدامات کرنا پڑتے ہیں حکمرانوں کی نااہلی سے ترقی کا ٹائی ٹینک ڈوب رہاایک وقت تھا جب اس ملک میں ڈرائینگ روم کی سیاست کا دور دورہ تھا اس ماحول میں ذوالفقارعلی بھٹو نے عام آدمی کو سیاست سے روشناس کروایا عوام کو اپنے حقوق کااحساس ہوا ہمارے ملک کے بیشتر سیاستدان نسل درنسل اقتدارکے مزے لوٹ رہے ہیں سیاست بھی ان کے گھر کی لونڈی ہے موجودہ جمہوریت ان کی سب سے بڑی محافظ۔۔ عام آدمی کو دووقت کی روٹی کے لالے پڑے ہوئے ہیں ان کے بچے پڑھ لکھ بھی جائیں تو نوکری کیلئے خجل خوار ہونا مقدر بن جاتاہے زیادہ تر معاشی غلامی میں ہیں جہاں لوگ اپنی مرضی سے ووٹ دینے پر قادر نہ ہوں تبدیلی کیسے آئے گی؟ تبدیلی تو اندر سے آتی ہے۔لیکن عوام کی طاقت،سیاست کے بدلتے تیور اور جمہوریت کے استحکام نے ان لوگوں کو مضطرب کرکے رکھدیاہے کیونکہ وہ اندر کے خوف سے بے چین ہیں یہ وہی لوگ ہیں جو ہر قسم کی تبدیلی کے خلاف ہیں کیونکہ تبدیلی تو ان کے خلاف آناہے جن کی مزاحمت شدید ترہورہی ہے۔۔ دوسروں کیلئے سوچنا شیوہئ پیغمبری ہے درحقیقت یہی ہیرو کہلوانے کے حقدارہوتاریخ بتاتی ہے کسی نظریہ کیلئے قربانیاں دینے والے دنیامیں ہمیشہ زندہ رہتے ہیں ناموافق حالات، طاقت کا بے رحم استعمال اورریاستی جبر بھی ان کے ارادے متزلزل نہیں کرسکتا اور مشکلات بھی راستہ نہیں روک سکتیں ۔ غور سے دیکھا جائے تو پاکستان میں صرف دو ہی طبقے ہیں ایک بااختیار۔ دوسرا بے اختیار لوگوں کا۔ جب بھی تاریخ لکھی جائے گی عوام کو شعور دینے والے تمام رہنماؤں کی جدوجہد کیلئے لوگوں کی استقامت اور جرأت کو ہمیشہ یادرکھا جائے گا اس سے شعور و آگہی کے کئی سورج طلوع ہوں گے۔ عام آدمی جب یہ محسوس کرتاہے کہ استحصالی نظام کو بچانے کیلئے زرداری،فضل الرحمن،نوازشریف جیسے سیاستدان اندر سے ایک ہیں یہ سب مفادات کے لئے متحدہیں۔ کتنی ستم ظریفی ہے کہ قومی و مذہبی رہنما جن کا ایک دن کے اخراجات لاکھوں میں ہیں وہ بھی سالانہ چند ہزار ٹیکس دیتے ہیں تو اس کا مطلب ہے پارلیمنٹ ان دو نمبر لوگوں سے بھری پڑی ہے جو اول درجے کے جھوٹے اور ٹیکس چورہیں حکمران تو محض اپنے اقتدارکو جمہوریت سمجھ کر تنقید کرنے والوں کوقابل ِ تعزیر سمجھنے لگتے ہیں۔عوام کی اکثریت کو ایک بات سمجھ نہیں آرہی حالانکہ یہ سامنے کی بات ہے آئین کی پہلی100شقوں پر عمل ہو جائے تو پاکستان کے غریبوں کی حالت اور حالات بدل جائیں گے۔ عوام جب یہ دیکھتے ہیں کہ کوئی معزز رکن پارلیمنٹ کے کسی بھی اجلاس میں غربت،مہنگائی،بیروزگاری،کرپشن اور لوڈشیڈنگ پر بات کرنا پسند نہیں کرتا۔۔۔کسی وزیر نے یہ بھی بتانا گوارانہیں کیا حکومت غربت کے خاتمہ کیلئے کیا کررہی ہیں؟۔ مہنگائی اور جرائم کی روک تھام کیلئے کیا ترجیحات ہیں؟ حالانکہ یہ سب عوام کے نمائندے ہیں الیکشن کے دوران ہر قیمت پر جیتنے کی خواہش میں مرنے مارنے پر تل جانے والے جب جیت جاتے ہیں تو ان میں سے نوے فی صد نے کبھی پارلیمنٹ میں زبان سے کبھی ایک لفظ ادانہیں کیا۔۔ کیا یہ گونگے ہیں؟۔اب تلک یہ ہوتا آیاہے جب بھی کوئی سیاستدان اقتدار میں آتاہے اس کے ارد گرد خوشامدی،درباری اور مفاد پرست قسم کے لوگ گھیرا ڈال لیتے ہیں جو درست بات بھی حکمر ان تک نہیں پہنچنے دیتے تکبر، رعونت،خوشامد اور خودپرستی کی وجہ سے وہ عوام سے دور جاتے ہیں میاں نواز شریف کے ساتھ بھی یہی کچھ ہو لیکن انہیں اس کا مطلق احساس نہیں اب نوازشریف کہاں ہیں اور ان کا بیانیہ کدھر گیا کوئی نہیں جانتا؟ اس قوم کو ہر نئے حکمران سے بہت سی توقعات وابستہ ہوجاتی ہیں اور وہ انہیں کے نعرے مارنے میں مگن ہو جاتی ہے میاں نوازشریف اور ان سے پہلے پرویزمشرف وہ پی آئی اے، سٹیل ملز جیسے قومی ادارے بیچ کرحالات درست کرنا چاہتے تھے لیکن ان کی دال نہیں گلی اب تبدیلی سرکار نے بھی ملزکی نجکاری کا عندیہ دیاہے کاش کوئی ان حکمرانوں کو سمجھائے کہ گھر کے برتن فروخت کرکے کبھی گذارا نہیں ہوتا معاملات میں خودکفیل ہوناپڑتاہے۔ محض خالی باتیں اور کھوکھلے دعوے کرنا الگ بات ہے لیکن ملکی ترقی اور خوشحالی کیلئے ٹھوس اقدامات کرنا پڑتے ہیں۔حکمرانوں کی نااہلی سے ملکی ترقی کا ٹائی ٹینک ڈوب رہاہے ورنہ جس ترقی کا دعویٰ زور و شور سے کیا جارہا تھا اسے آئی ایم ایف بہاکر لے گیا ہے باقی رہی سہی کثر ڈالر کی بڑھتی ہوئی قدر اور پاکستانی روپے کی بے توقیری نے پوری کردی ہے حالانکہ پاکستان میں ترقی کا فائدہ ہمیشہ صرف ٹھیکیداروں اور کاروباری خاندانوں کا فائدہ ہی ہوتاہے اور عام آدمی کی حصہ میں وہی محرومیاں ہیں جس کا شکار وہ پہلے سے ہیں۔ عوام نے کبھی منتخب نمائندوں، پارلیمنٹ اور وزیر ِ خرانہ سے پوچھنے کی جرأت نہیں کی کہ جناب غیرملکی قرضے کیوں لئے جارہے ہیں؟ ماضی میں لئے جانے والے قرضوں کا تصرف کیا رہا؟۔ کون سا نیا قومی منصوبہ شروع کیا گیا؟۔کیا حکمران قوم کو بتانا پسندکریں گے کہ قومی اثاثے اونے پونے بیچنے میں کیا منطق ہے اس سے پہلے PTCLاور MCBفروخت کرنے سے قوم کو کیا فائدہ ہوا۔کتنا منافع ملا؟۔ہمارے سیاستدانوں،بیوروکریٹس اور اشرافیہ نے ملک لوٹ کر جو رقم باہر جمع کرواروکھی ہے وہ کب واپس آئے گی اس کا مطلب ہے یہ لوگ پاکستان میں کاروبار کرنا بھی پسندنہیں کرتے کمال ہے پھر بھی میڈ ان پاکستان کہلاتے ہیں ان کے اپنے ادارے ترقی کرکے ایک سے دو۔دو سے درجن بن گئے ہیں لیکن قومی ادارے بیچنے کیلئے ان کے ملازمین کو گولیاں مار کر رنگین کیا جارہاہے جو حکمران چند ادارے چلانے کی اہلیت نہیں رکھتے وہ ملک کیا چلائیں گے؟ کاش کوئی حکمرانوں کو سمجھائے کہ گھر کے برتن فروخت کرکے کبھی گذارانہیں ہوتا معاملات میں خودکفیل ہوناپڑتاہے۔ محض خالی باتیں اور کھوکھلے دعوے کرنا الگ بات ہے لیکن ملکی ترقی اور خوشحالی کیلئے ٹھوس اقدامات کرنا پڑتے ہیں حکمرانوں کی نااہلی سے ترقی کا ٹائی ٹینک ڈوب رہا ہے ترقی کی اصل حقیقت کیا ہے؟کیا عوام نہیں جانتے؟ جاننے والے کڑھتے رہتے ہیں۔کس سے گلا کریں کس کو گلے لگا کر روئیں عوام جو بھی کریں ہمارا مشورہ ہے مولانا فضل الرحمن پرتنقیدنہ کریں وہ ہمیشہ ہر حکومت کے ساتھ ہوتے ہیں پہلی بار وہ اقتدار سے الگ ہوئے ہیں تو ان کے بین دیکھنے والے ہیں جیسے مچھلی پانی کے بغیرتڑپتی ہے یہی حال موصوف کا ہے ایم کیو ایم کی بات نہ کریں وہ بھی اقتدار سمندر کے بغیر بے توقیر ہے۔ قوم پرست محمودخان اچکزئی کو بھی چھوڑ دیں انہیں پہلی مرتبہ حکومت میں آنے کا موقعہ ملاتو انہوں نے بھی میاں نوازشریف سے وفا کرنے کا حق ادا کردیا اس کے پیچھے بھی ان کی محرومیاں بولتی ہیں کیونکہ موجودہ وزیر ِ اعظم نے ان کو ابنی تک گھاس نہیں ڈالی اب اصلی،اپوزیشن ہونے کی د عویدار پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کی بات کرتے ہیں ارکان ِ اسمبلی کی مراعات کا معاملہ ہویا مفادات یہ سب ہمیشہ شیروشکرہوجاتے ہیں جب بھی ارکان ٍ اسمبلی کی مراعات کا بل پیش ہوتا ہے قسم لے لو کوئی ایک بھی اس بل کی کبھی مخالفت کرتاہو لیکن مزے کی بات یہ ہے کہ ہر کوئی انقلاب لانے کے بلند وبانگ دعوے کرتا ہے اورسب کے پاس نہ جانے کتنے زرداری،کتنے میاں،کتنے منشاء،کتنے ڈراکولاہیں جو ملکی معیشت کی رگوں سے آخری قظرہ خون تک چوسنے کیلئے بے تاب رہتے ہیں۔ عوام کس پر مقدمہ کریں کس کو منصف کریں؟ چند ماہ پہلے ختم ہونے والی مسلم لیگ ن کی حکومت کے دور میں پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی ایک رپورٹ میں کہا گیاہے کہ حکومت نے نجی پاور کمپنیوں کو ایک ہفتہ کے دوران غیرقانونی طورپر480ارب اداکئے دلچسپ بات یہ ہے کہ کمپنیوں نے خود15%کم وصولی کا مطالبہ کیا سیکرٹری پانی و بجلی کو اضافی ادائیگی واپس لینے اورنجی پاور کمپنیوں کی پیداواری صلاحیت کا ازسرنو آڈٹ کروانے کا حکم بھی دیا کیا منطقی انجام کیا ہوا؟ کوء ینہیں جانتا ایک اور خوفناک بات یہ بھی سننے میں آنی ہے کہ کچھ نجی پاور کمپنیوں کو فوٹو سٹیٹ کاپی پر ادائیگی کردی گئی مال ِ مفت دل ِ بے رحم کی شاید اس سے بہترمثال مل ہی نہیں سکتی۔ پاکستان کے ساتھ حکمرانوں کا یہ رویہ انتہائی افسوس ناک ہے یہ ساری باتیں ارکانِ پارلیمنٹ کے نوٹس میں ہیں جو ذاتی معاملات پر طوفان اٹھا لیتے ہیں بات بات پر ان کااسحقاق مجروح ہوتا ہے قومی مفادات پر آواز بلند نہ کرنے کا مطلب ہے ارکانِ اسمبلی واقعی گونگے ہیں۔ گونگے کہیں کے۔ ہمارے نگران وزیر ِ اعظم نے سوات میں اپنی والدہ محترمہ کی قبر پر فاتحہ پڑھی جو قوم کو 6کروڑ میں پڑی، کسی ادارہ یا کسی شخصیت نے مجال ہے اس کا نوٹس بھی لیا ہو کہ جناب عوام کے ٹیکسز کے ساتھ یہ کیا کیا جارہاہے گونگے کہیں کے۔ ہمیں یقین ہے جتنے بھی عام انتخابات ہوجائیں ان کے نتیجہ میں بھی کچھ تبدیل نہیں ہوگا غریبوں کا یہی حال رہے گا اور ارکان ِ اسمبلی بھی ان جیسے ہی آئیں گے یعنی ہم نہ ہوں گے تو کوئی ہم جیساہوگا مطلب انشاء اللہ حال و مستقبل میں بھی ماضی جیسے گونگے ہی منتخب ہوں گے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*