بنیادی صفحہ -> اداریہ،کالم -> بھارتی الیکشن پر بھارتی میڈیا کی سازشیں ناکام
بھارتی الیکشن

بھارتی الیکشن پر بھارتی میڈیا کی سازشیں ناکام

بھارتی الیکشن پر بھارتی میڈیا کی سازشیں ناکام
تحریر سدرہ اسلم
پاکستان بننے کے بعد سے ہی بھارت اور پاکستان کے مابین تعلقات سرد مہری کا شکار رہیں ہیں اس سب کے باوجود پاکستان نے بہت بار بھارت کی ہٹ دھرمی کو نظرانداز کیا مگر جب بات اپنے ملک کے وقار کی ہو تو پاکستان کسی صورت پیچھے نہیں ہٹے گا۔ بھارت میں عام انتخابات کی وجہ سے ماحول گرم ہے نریندر مودی جو کہ بھارت کا وزیراعظم ہے وہ دوبارہ الیکشن میں جیتنے کے لئے اس ہتھیار کو میڈیا کے ذریعے استعمال کر رہا ہے جو بھارت کو تباہ و برباد کرنے کیلئے کافی ہے یاد رہے نریندر مودی (بھارتی جنتا پارٹی)بی جے پی جماعت سے تعلق رکھتا ہے جو کہ انتہا پسند ہندو جماعت ہے اور اس جماعت کا سب سے بڑا مقصد بھارت میں مسلمانوں کے خلاف سازشیں کرنا ہے۔یہ سیاسی جماعت بال ٹھاکرے جیسے انتہا پسند ہندو نے بنائی اور یہی نہیں یہ وہی لوگ ہیں جنہوں نے 6 دسمبر1992 کو بابری مسجد کو شہید کیا اور اس پر قبضہ کرلیا۔ بی جے پی بھارت کی ایسی انتہا پسند سیاسی جماعت ہے جو مسلمانوں کے خلاف ہر روز ایک نیا مہاز کھول کر انتہا پسند ہندوں کو اکساتی ہے کہ بھارت میں بسنے والے مسلمانوں کا قتل عام کیا جائے اور انہیں ڈرادبا کر رکھا جائے تاکہ وہ آواز نہ اٹھا سکیں اور اپنے حق کیلئے لڑ نہ سکیں۔ یہی وہ لوگ بھی ہیں جنہوں نے 2002 میں گجرات میں مسلمانوں کو زندہ جلایا اور انہیں ظلم و بر بریت کا نشانہ بنایا ان تمام لوگوں کا سب سے بڑا مقصد مسلمانوں کو نقصان پہنچانا ہے مودی اسی انتہا پسند جماعت سے الیکشن لڑ کر وزیراعظم بنا دوبارہ جیتنے کے لئے وہ اوچھے ہتھکنڈے استعمال کرنے کے لئے بھارت کے میڈیا کے ساتھ مل کر پروپیگینڈہ کر رہا ہے جس میں یہ امکانات قوی ہیں کہ بھارت کی حکومت نے خود جان بوجھ کر کشمیر میں اپنی کی فوج پر حملہ کروایا اور پھر اس کا الزام پاکستان پر دھر دیا تاکہ ایسے حالات پیدا کیے جائیں کہ عوام کی تمام تر توجہ جنگ کی طرف لگا کر الیکشن اور بی جے پی کی انتہا پسند کاروائیوں سے ہٹائی جا سکے اس سازش میں بھارت کا میڈیا بھی حکومت کا پورا پورا ساتھ دے رہا ہے اور پاکستان پر بے بنیاد الزامات لگانے میں سب سے اگے ہے کبھی بھارت کے میڈیا کی جانب سے بیان سامنے آتا ہے کہ ٹماٹر پاکستان نہیں پھیجیں گے کبھی کہا جاتا ہے کہ پاکستان کا پانی بند کر دیا جائے گا۔ مگر اب تو بھارتی میڈیا نے حد کردی انہوں نے کہا ہے کہ بھارتی فوج نے پاکستان کے شہر بالا کوٹ میں حملہ کر کے 300سے زائید دہشت گرد ہلاک کر دئیے ہیں جس خبر میں ذرا برابر بھی سچائی نہیں بلکہ سچ تو یہ ہیں بھارتی طیارے کو پاکستانی حدود میں داخل ہوتے ہی پاک فوج نے مار گرایا جس سے بھارتی میڈیا کا غلیظ چہرہ پوری دنیا کے سامنے آگیا۔ بھارت کی جانب سے روز بروز ایسے بیانات سامنے آرہے ہیں جنہیں سن کر کوئی بھی عقلمند انسان اندازہ لگا سکتا ہے کہ بھارت کس حد تک بوکھلا گیا ہے۔ کشمیر میں یہ کاروائی خود کر کے پاکستان پر الزام لگانا بھارت کے لئے ایسا عمل ہے جسے یوں کہیں تو غلط نہ ہوگا کہ بھارت نے اپنے پاوں پر خود ہتھوڑا دے مارا ہے کیونکہ ایسا کرنے سے کشمیری مسلمانوں کے دل میں بھارت کے خلاف نفرت میں مزید اضافہ ہوا ہے۔ اس حملے کے بعد بھارت میں رہینے والے کشمیری مسلمانوں کو بھی بھارتی انتہا پسندوں کی جانب سے شدید تشدد کا نشانہ بنایا گیا اور انہیں بھارت چھوڑنے پر مجبور کردیا۔ ان سب حالات کے پیچھے ایک گہری سازش کی گئی ہے جس میں صرف ایک انسان اپنے فائدے کے بارے میں سوچ رہا ہے جبکہ اس نے فائدہ حاصل کرنے کے بجائے نقصان زیادہ اٹھانا ہے وہ ہے بھارت کا وزیراعظم نریندر مودی جو اتنے غلط فیصلے کر چکا ہے کہ اب اس کے پاس پچھتانے کے سوا کوئی راستہ نہیں۔ بھارتی میڈیا کی اگر بات کی جائے تو وہ ایک ایسی کٹپتلی ہے جو بھارتی حکومت کے اشاروں پر ناچ رہی ہے۔ وقتا فوقتا جنگ کی دھمکیاں بھارت کو بھاری پڑھ رہی ہے یہ دھمکی ایک ایسی ہڈی بن گئی ہے جو نہ تو بھارت سے نگلی جارہی ہے اور نہ وہ اسے اگل پا رہے ہیں کیونکہ بھارت کی فوج بھی یہ جانتی ہے کہ پاکستان کی فوج ان سے زیادہ با صلاحیت ہے اور پاکستانی فوج کے جوان ہر وقت جنگ کے لئے تیار ہیں۔ بھارت پاکستان کا مقابلہ کسی صورت نہیں کر سکے گا۔ پہلی بات تو یہ بھارت کے میڈیا کی جانب سے دی جانے والی بے بنیاد خبروں کے ذخیرے کے سوا کچھ نہیں اگر ہم یہ کہیں کہ بھارت پاکستان کے ساتھ میڈیا وار لڑ رہا ہے تو یہ غلط نہیں ہوگا۔ کیونکہ بھارتی میڈیا کی جانب سے پاکستان پر غلط اور بے بنیاد الزامات کی بوجھاڑ کی جارہی ہے۔ بھارت کی سب سے بڑی غلطی پاکستان کو معاملات سے بے خبر تصور کرنا ہے۔ ہر بدلتی ہوئی صورتحال پر نہ صرف پاک فوج کے جوانوں کی نظر ہے بلکہ پاکستانی عوام بھی اس تمام تر صورتحال سے واقف ہے۔ سوشل میڈیا اتنا طاقتور ہوگیا ہے کہ کھنٹوں کی خبریں منٹوں میں دنیا کے کونے کونے میں پھیلائی جارہی ہیں جس کی وجہ سے یہ میڈیا وار کوئی اور ہی رنگ اختیار کرتی جارہی ہے مگر ڈرنا صرف بھارت کو چاہیے کیونکہ جن کے عزم اور حوصلے بلند ہوں وہ ان گیدڑ بھپکیوں سے ڈرا نہیں کرتے

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*