بنیادی صفحہ -> دنیا کی خبریں -> امریکہ کی بھارت F-21 طیارے تیارکرکے دینے کی پیشکش
F-21

امریکہ کی بھارت F-21 طیارے تیارکرکے دینے کی پیشکش

لاہور(ویب ڈیسک): امریکا کی سب سے بڑی طیارہ ساز کمپنی لوک ہیڈ مارٹن نے بھارت کو ایف-21 جنگی طیارے بنا کر دینے کی پیشکش کردی، جو صرف مخصوص بھارت کے لیے ہی تیار کیے جائیں گے،شراکت داری سے نہ صرف بھارت اپنی ضروریات پوری کر پائے گا بلکہ اس کی دفاعی صلاحیت میں اضافہ ہوگا اور صنعتی ضرورت بھی پوری ہوگی۔بیان میں کہا گیا کہ بھارت کو اس وقت جدید ٹیکنالوجی اور دفاعی صلاحیت میں توسیع کی ضرورت ہے۔ بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکا کی سب سے بڑی طیارہ ساز کمپنی لوک ہیڈ مارٹن نے بھارت کو ایف-21 جنگی طیارے بنا کر دینے کی پیشکش کردی، جو صرف مخصوص بھارت کے لیے ہی تیار کیے جائیں گے۔خیال رہے کہ حال ہی میں بھارت کی جانب سے 18 ارب ڈالر کے ایک سو 14 جنگی طیارے خریدنے کی کوششیں جاری ہیں جس کے لیے ٹینڈرز بھی جاری کیے گئے جو حالیہ دور میں دنیا کی سب سے بڑی فوجی ڈیل ہیں۔امریکی کمپنی لوک ہیڈ مارٹن کا ایف-21، بوئنگ کا ایف اے – 18، ڈیسالٹ ایویشن کا رافیل، یورپی کمپنی کا یورو فائٹر ٹائفون، روس کا مگ 35 اور سوئیڈش کمپنی ساب کا گریپن، وہ طیارے ہیں جن کی خریداری میں بھارت دلچسپی رکھتا ہے۔مذکورہ ٹینڈرز کے پیش نظر لوک ہیڈ مارٹن کی جانب سے ایک بیان جاری کیا گیا تھا، جس میں کمپنی کا کہنا تھا کہ وہ بھارت کے طویل مدتی بین الاقوامی دفاعی شراکت داری کے لیے پر عزم ہے۔بیان میں یہ بھی کہا گیا کہ کمپنی نے بھارت کو ایف-21 طیارے تیار کرنے کی پیشکش کردی ہے، اگر بھارتی حکومت اسے قبول کرتی ہے تو پھر یہ طیارے دوبارہ کسی بھی ملک کے لیے تیار نہیں کیے جائیں گے۔اس کے ساتھ ساتھ یہ بھی کہا گیا کہ بھارت کے ساتھ ہماری تجویز کردہ شراکت داری سے نہ صرف بھارت اپنی ضروریات پوری کر پائے گا بلکہ اس کی دفاعی صلاحیت میں اضافہ ہوگا اور صنعتی ضرورت بھی پوری ہوگی۔بیان میں کہا گیا کہ بھارت کو اس وقت جدید ٹیکنالوجی اور دفاعی صلاحیت میں توسیع کی ضرورتہے جس کے لیے لوک ہیڈ مارٹن کی پیشکش ایک گیم چینجنگ دفاعی شراکت ہوسکتی ہے۔لوک ہیڈ مارٹن کے اسٹریٹیجی اور بزنس ڈیولپمنٹ کے نائب صدر وویک لال نے بھارتی خبر رساں ادارے پریس ٹرسٹ آف انڈیا کو بتایا کہ اگر بھارت ان کی کمپنی کے ساتھ معاہدہ کرتا ہے تو ایف-21 کی ٹیکنالوجی اور اس کی کانگریشن وہ دنیا میں کسی دوسرے ملک کو فروخت نہیں کرے گا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*