بنیادی صفحہ -> شوبز کی خبریں -> پاکستانی فلم ’زندگی تماشا‘ نے عالمی ایوارڈ اپنے نام کرلیا

پاکستانی فلم ’زندگی تماشا‘ نے عالمی ایوارڈ اپنے نام کرلیا

لاہور(ویب ڈیسک) پاکستانی فلم ’زندگی تماشا‘ بوسان عالمی فلم فیسٹیول کا معتبرترین ’کم جسوئک‘ ایوارڈ اپنے نام کرنے میں کامیاب ہوگئی۔

تفصیلات کے مطابق : کچھ روز قبل ہدایت کار سرمد کھوسٹ کی فلم ’زندگی تماشا‘ کی پہلی جھلک جاری کی گئی تھی جسے لاکھوں لوگوں نے دیکھا جبکہ ٹریلر کے آخر میں یہ بھی بتایا گیا تھا فلم کو بوسان فلم فیسٹول میں بھی پیش کیا جائے گا۔ بعد ازاں سرمٹ کھوسٹ نے اپنے سوشل میڈیا اکاؤنٹ کے ذریعے مداحوں کو یہ خوشخبری بھی سنائی تھی کہ ان کی فلم ’زندگی تماشا‘ کو عالمی فلم فیسٹول کے معتبر ترین ’کم جسوئک‘ ایوارڈ کے لیے بھی نامزد کیا گیا ہے۔

جنوبی کوریا کے شہر بوسان میں سالانہ منعقد کیے جانے والے عالمی فلم فیسٹیول میں پاکستانی فلم ’زندگی تماشا‘ کو گزشتہ ہفتے پیش کیا گیا تھا جس کے بعد فلم نے ’کم جسوئک‘ ایوارڈ اپنے نام کرلیا۔

’کم جسوئک‘ ایوارڈ بوسان عالمی فلم فیسٹیول کا سب سے معتبر ایوارڈ سمجھا جاتا ہے جو کہ ہر سال کسی ایک فلم کو دیا جاتا ہے، مگر اس سال یہ ایوارڈ پاکستانی فلم ’زندگی تماشا‘ کے ساتھ بھارتی فلم ’مارکیٹ‘ کو مشترکہ طور پر دیا گیا ہے۔ فلم ’زندگی تماشہ‘ کی کہانی صوبہ پنجاب کے شہر لاہور میں مختلف افراد کی زندگی گزارنے کے فن کا آئینہ ہوگی اور یہی وجہ ہے کہ فلم کی مکمل عکس بندی لاہور میں کی گئی ہے۔ ’زندگی تماشا‘ کے مختصر ٹریلر کے مطابق فلم کی کہانی میں ایک بزرگ نعت خواں ہیں اور ان کی ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر اپ لوڈ ہوجاتی ہے اور فلم کی کہانی بھی اسی واقع پر مبنی ہے۔

واضح رہے کہ سرمد کھوسٹ کے ساتھ اس فلم کی شریک پروڈیوسر ان کی بہن کنول کھوسٹ ہیں جب کہ فلم کا اسکرپٹ نرمل بانو نے تحریر کیا ہے۔ ہدایت کار سرمد کھوسٹ نے سوشل میڈیا پر گزشتہ روز قبل اپنی فلم کے کرداروں کی پہلی جھلک بھی متعارف کروائی تھی جس میں اداکارہ سمیا ممتاز ’فرخندہ‘ نامی خاتون کا کردار ادا کررہی ہیں۔ اس کے علاوہ فلم کی کاسٹ میں عارف حسن، ماڈل ایمان سلیمان اور علی قریشی بھی شامل ہیں۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*