بنیادی صفحہ -> اہم خبریں -> معاشی ترقی کیلئے امن قائم ہونا ضروری ہے
وزیرخارجہ شاہ محمودقریشی

معاشی ترقی کیلئے امن قائم ہونا ضروری ہے

وزیرخارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے اسلام آباد میں عالمی لیڈرزکانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں 25 ممالک کے 60 وفود کواس کانفرنس میں شرکت کیلئے پاکستان آمد پرخوش آمدید کہتا ہوں، میں یورپی یونین، یورپین پارلیمنٹ کے تعاون کا شکر گزار ہوں، 26 مارچ کو موگیرینی پاکستان تشریف لارہی ہیں اوریورپی یونین اورپاکستان کے مابین اسٹریٹیجک شراکت داری پر مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط کیے جائیں گے۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستانی عوام نے تحریک انصاف کوتبدیلی کیلئے ووٹ دیا، عوام نے روایتی سیاسی جماعتوں کو مسترد کیا اورپانچ سالہ مدت کے اختتام پر آپ تبدیلی دیکھیں گے۔ وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ بھارت نے پلوامہ حملے کے بعد سیاسی مقاصد کیلئے جنگی ماحول پیدا کیا، وزیراعظم عمران خان نیشنل ایکشن پلان پرمکمل عمل درآمد کے لیے پرعزم ہیں اور دہشتگردی سے نمٹنے کے لیے تمام جماعتیں آگے آئیں۔ شاہ محمود نے کہا کہ ہماری حکومت کی اولین ترجیحات میں سے ایک ترجیح اقتصادی بحالی ہے، ہم چاہتے ہیں کہ پاکستانی یہاں رہیں اورانہیں اقتصادی ترقی کے بہترین مواقع میسرہوں اوروہ اپنے پاکستانی ہونے پرفخرکرسکیں، ہمیں بہت سے اقتصادی چیلنجزکا سامنا ہے اور ہم ان سے باخبر ہیں جب کہ ہمیں اداروں کے انحطاط کا ادراک ہے
.
.
.
.
.
یہ خبر بھی پڑھیئے
….
اوکاڑہ ، نوجوانوں نے لڑکی کے ساتھ زیادتی اورچھڑنے سے منع کرنے پر لڑکی کے باپ کو تشدد کرکے ہلاک کر دیا
منچلے نوجوانوں نے لڑکی کے ساتھ زیادتی اورچھڑنے سے منع کرنے پر لڑکی کے باپ کو تشدد کرکے ہلاک کر دیا تفصیلات کے مطابق ظفراقبال سکنہ صدر گوگیرہ اپنے گھروالوں کے ساتھ اپنی بھتیجی کی شادی پر آیا ہو اتھا رخصتی کے بعد ظفر اقبال واپس اپنے گھر صدر گوگیرہ آرہا تھا کہ دومنچلے نوجوانوں نے ان کو راستہ میں روک لیا اور لڑکیوں کے ساتھ زیادتی اور چھڑنے لگے تو ظفر اقبال نے انکو منع کیا تو انہوں نے ظفر اقبا ل کو تشدد کا نشانہ بنایااور وہ موقع پر ہی ہلاک ہو گیا ۔
اوکاڑہ کے شہریوں کو مردار جانوروں کا گوشت کھلانے والا چھ رکنی گروہ پکڑا گیا گروہ میں چار قصاب اور ایک رکشہ ڈرائیور بھی شامل ہے ملزمان نے درجنوں جانوروں کو زہریلی گولیاں کھلا کے مارنے ا ور بعد میں ان کو ذبح کر کے گوشت مارکیٹ میں فروخت کرنے کا اعتراف کر لیا مقدمہ درج ترجمان پولیس کے مطابق ڈی پی او اطہر اسماعیل کو اطلاع ملی تھی کہ سٹی سرکل کے علاقہ میں ایک ایسا گروہ متحرک ہے جو کہ کھلی جگہ پر بندھے مویشیوں کو پہلے زہریلی گولیاں کھلا کر مارنے کے بعد اس کا گوشت مارکیٹ میں قصابوں کو فروخت کرتا ہے جس پر ڈی پی او اطہر اسماعیل نے ڈی ایس پی سٹی سرکل ندیم افضال اور ایس ایچ او اے ڈویژن قلب سجاد کو ملزمان کی فوری گرفتاری کی ہدایت کی ایس ایچ او اے دویژن قلب سجاد نے ماتحت نفری کے ہمراہ ڈرامائی انداز میں کارروائی کرتے ہوئے مرکزی ملزم ناظم علی سکنہ عزیز پارک کو اس کے ساتھی رکشہ ڈرائیور صداقت علی کو اس وقت حراست میں لیا جب وہ ایک مردار جانورکو ذبح کر نے کے بعد اس کا گوشت مارکیٹ میں دینے جا رہے تھے پولیس نے گرفتار ملزمان سے روایتی تفتیش کی تو ملزمان نے اعتراف جرم کرتے ہوئے بتایا کہ وہ عرصہ دراز سے یہ مکروہ دھندہ کر رہے ہیں ملزمان نے بتایا کہ وہ پہلے کسی کھلی جگہ پر بندھے مویشی کو گندم میں رکھنے والی گولیاں آٹے میں مکس کر کے کھلا دیتے تھے جب جانور ہلاک ہو جاتا تو رکشہ ڈرائیور موقع پر جا کر جانورو کو ٹھکانے لگانے کے بہانے مالک کی مرضی سے لوڈ کر کے کسی اور جگہ منتقل کرتا جہاں اس کی کھال اتارنے کے بعد اس کے گوشت کو مارکیٹ کے قصابوں ارشد عرف موچھا ،اسلم ،ریاض او ا س کے بیٹے عامر کو220روپے فی کلو کے حساب سے فروخت کر دیتے تھے جن کو ملزمان قصاب اپنی دوکانوں پر 480روپے فی کلو فروخت کرتے تھے پولیس نے گرفتار ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کرتے ہوئے تحقیقات کا دائرہ وسیع کر دیا ہے اس دوران محکمہ لائیو سٹاک کے ڈاکٹر ثاقب مجید نے اپنی نگرانی میں پولیس کے قبضہ میں لیے جانے والا گوشت تلف کروا دیا ۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*