Buy website traffic cheap

احتساب عدالت

احتساب عدالت کو العزیزیہ، فلیگ شپ ریفرنسز شریف خاندان کا ٹرائل مکمل کرنے کیلئے مزید 6 ہفتے کی مہلت مل گئی

لاہور(ویب ڈیسک): سپریم کورٹ آف پاکستان نے نے احتساب عدالت کو نواز شریف اور انکے بچوں کے خلاف ریفرنسز کا ٹرائل مکمل کرنے کے لیے 6 ہفتے کی مہلت دے دی۔چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں جسٹس عمرعطا بندیال اورجسٹس اعجاز الاحسن پرمشتمل سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے العزیزیہ اسٹیل اورفلیگ شپ انویسٹمنٹ ریفرنسزکی سماعت مکمل کرنے کی مدت میں توسیع کے لیے احتساب عدالت کی جانب سے دائر درخواست کی سماعت کی۔نوازشریف کے وکیل خواجہ حارث نے عدالت سے استدعا کی کہ نیب ریفرنسز کا ٹرائل مکمل کرنے کے لیے 15 دسمبرتک کا وقت دیا جائے، جس پرچیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ یہ وقت بہت زیادہ ہے، اتنا وقت نہیں دیا جاسکتا، سپریم کورٹ نے فریقین کے دلائل سننے کے بعد احتساب عدالت کونوازشریف کے خلاف ریفرنسزکے ٹرائل مکمل کرنے کے لیے 6 ہفتے کی مہلت دے دی، سپریم کورٹ نے احتساب عدالت کوہفتہ وارپیش رفت رپورٹ بھجوانے کا بھی حکم دیا،دوران سماعت چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ ٹرائل کورٹ کو ریگولیٹ کرنا ہمارا کام نہیں ، احتساب عدالت کو مناسب وقت دے سکتے ہیں، چیف جسٹس نے خواجہ حارث کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ مرتبہ آپکو ہفتے کے روز دلائل دینے کی تجویز دی تو آپ نے برا منایا، آپ بطور احتجاج وکالت سے دستبردار ہو گئے،میں تو خود ہفتے کے روز کام کرتا ہوں، احتساب عدالت کو دونوں ریفرنسز نمٹانے کے لیے چھ ہفتوں کی مہلت مناسب ہوگی، نیب پراسکیوٹر کا کہنا تھا یہ عدالت کی طرف سے چھ ہفتوں کاوقت ملنا مناسب ہے، واضح رہے کہ نوازشریف کو ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا ہوچکی ہے جب کہ ان کے خلاف العزیزیہ اسٹیل اورفلیگ شپ انویسٹمنٹ ریفرنسز جاری ہے۔