Buy website traffic cheap

تصاویر لینے پر

تصاویر لینے پر سارا علی خان نے فوٹوگرافرزکو کھری کھری سنادیں

تصاویر لینے پر سارا علی خان نے فوٹوگرافرزکو کھری کھری سنادیں
ممبئی: بالی ووڈ میں چھوٹے نواب کی بیٹی سارا علی خان نے مندرکے باہران کی متعدد تصاویر لینے پرفوٹوگرافوں کو کھری کھری سنادیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق بالی ووڈ اداکارہ اورسیف علی خان کی بیٹی سارا علی خان اپنے بھائی ابراہیم علی خان اور ماں امرتا سنگھ کے ساتھ پوجا کرنے اورغریب لوگوں میں سامان تقسیم کرنے گئیں جہاں ان کا فوٹوگرافروں نے پیچھا نہ چھوڑا۔سارا علی خان نے جیسے ہی مندر کے باہرموجود لوگوں میں سامان تقسیم کرنا شروع کیا تو فوٹوگرافوں نے تصویریں لینا شروع کردیں جو انہیں ذرا بھی پسند نہ آیا اوران کی جانب سے منع کیا گیا۔ اداکارہ کی جانب سے باربارمنع کرنے کے باوجود فوٹوگرافرباز نہ آئے جس پر اداکارہ برہم ہوگئیں اور باربار کہا کہ یہ سب بند کردو۔

ضرور پڑھیئے:

مجوزہ صدارتی انتخابات سے ملک میں آئینی بحران پیداہونے کا خدشہ، انتخابات کے التوا کے لیے درخواست دائر
لاہور: صدارتی انتخاب کے فوری التواء کے لئے الیکشن کمیشن کے روبرو آئینی درخواست دائر کر دی گئی کمیشن کو بتایا گیا کہ آئین کے آرٹیکل 41 کی رو سے مذکورہ انتخاب 24 اگست سے قبل منعقد ہونا چاہئے تھا کیونکہ قومی اسمبلی کے انتخابات 25 جولائی کو ہوئے اور آئین کہتا ہے کہ صدارتی الیکشن اسمبلی کے انتخابات کے 30 دن کے اندر ہونا چاہئے ۔ کمیشن پر واضع کیا گیا کہ گزشتہ اسمبلی 31 مئی کو تحلیل ہوئی اور 25 جولائی تک صدارتی انتخاب ممکن نہ تھا کیونکہ قومی اسمبلی صدارتی الیکٹورل کالج کا سب سے بڑا حصہ ہے اور اس کی عدم موجودگی میں آئین صدارتی الیکشن کی کوئی گنجائش ہی نہیں رکھتا ۔ کمیشن کو بتایا گیاکہ سیکرٹری الیکشن کمیشن نے صدارتی انتخاب سے متعلق آئینی شقیں پڑھنے میں سنگین غلطی کی ہے جس سے صدارتی الیکشن متنازعہ ہو سکتا ہے ۔ صدر پاکستان فی الوقت ملک سے باہر ہیں اور تاحال انہوں نے ان انتخاب میں حصہ لینے کا کوئی ارادہ ظاہر نہیں کیا اگرچہ آئین انہیں دوسری مدت کے لئے امیدوار بننے کی خصوصی اجازت دیتا ہے ۔ آزاد صحافی شاہد اورکزئی نے کمیشن پر واضح کیا کہ صدر مملکت کی آئینی مدت کے آخری 30 دنوں میں صدارتی انتخاب کی اجازت نہیں ہے کیونکہ یہ دن انتقال اقتدار کے لئے رکھے گئے ہیں جبکہ کمیشن نے پولنگ کے لئے 4 ستمبر کی تاریخ مقرر کی ہے اور صدر کے عہدے کی مدت 9 ستمبر کو ختم ہو رہی ہے ۔ حکم التواء کی درخواست میں کہا گیا کہ پولنگ کے وقت کا تعین اور اس کے امکانی نتائج الیکشن کو متنازعہ بنا سکتے ہیں اور اس ضمن میں کمیشن کی کوتاہی بیک جنبش قلم درست نہیں کی جا سکتی لہذا الیکشن شیڈول فی الفور معطل کیا جائے ۔