Buy website traffic cheap

اکائونٹس

حکومت کا گردشی قرضوں کی مد میں 50ارب فوری ادا کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد (مانیٹر نگ ڈیسک )حکومت نے گردشی قرضوں کی مد میں 50 ارب روپے فوری ادا کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ذرائع وزارت خزانہ کے مطابق 50 ارب روپے جاری کرنے کا فیصلہ آئی پی پیز کی طرف سے بجلی کی پیداوار بند کرنے کی دھمکی پر کیا گیا۔ذرائع کا کہنا ہے کہ محرم الحرام اور ہفتہ وار چھٹیوں کی وجہ سے ادائیگی مرحلہ وار پیر کے روز سے کی جائے گی۔ ذرائع کے مطابق پیر کے روز 34 ارب روپے وزارت توانائی کو دیئے جائیں گے جس کے بعد 16 ارب روپے رواں ماہ کے آخر میں ادا ہوں گے۔ذرائع نے کہا ہے کہ گردشی قرضوں کی ادائیگی کے لیے 50 ارب روپے 8 پاکستانی بنکوں سے قرض لیے گئے ہیں۔

یوٹیلیٹی اسٹورز میں کروڑوں کی بے ضابطگیوں کا انکشاف
اسلام آباد(یواین پی ) یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن آف پاکستان میں کروڑوں روپے کی بے ضابطگیوں کا انکشاف ہوا ہے۔چیف فنانشل آفیسر یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن نے پیمنٹ کمیٹی اور ایم ڈی کی اجازت کے بغیر فلور ملوںکو 10کروڑ روپے ادائیگی کر دی۔ کارپوریشن کے ایم ڈی نے خلاف ضابطہ ادائیگیوں پر سی ایف او سے جواب طلب کر لیا ہے۔ذرائع کے مطابق خسارے کا شکار یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن آف پاکستان (یو ایس سی) میں بڑے پیمانے پر بے ضابطگیوں کا انکشاف ہوا ہے۔ یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن کے چیف فنانشل آفیسر (سی ایف او) حمود الرحمن کی جانب سے کارپوریشن کی پیمنٹ کمیٹی اور ایم ڈی سے اجازت لیے بغیر فلور ملوں کو 10کروڑ روپے کی ادائیگی کر دی گئی ہے جس پر ایم ڈی یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن افتخار شلوانی نے ان ادائیگیوں کو خلاف ضابطہ قرار دیتے ہوئے چیف فنانشل آفیسر حمود الرحمن سے تین دن کے اندر جواب طلب کر لیا ہے۔کارپوریشن انتظامیہ کی جانب سے سی ایف او سے اس معاملے پر تین دن کے اندر وضاحت طلب کر لی گئی ہے اور پوزیشن واضح نہ کرنے کی صورت میں چیف فنانشل آفیسر کے خلاف کارروائی کا عندیہ دیا گیا ہے۔ یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن آف پاکستان کے چیف فنانشل آفیسر نے کہاکہ ایم ڈی کو کسی نے غلط گائیڈ کیا ہے، ہم نے یہ فنڈز کارپوریشن کے ریجنل دفاتر کو جاری کیے ہیں، اس میں کسی قسم کی بے ضابطگی نہیں ہے۔یاد رہے کہ یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن آف پاکستان کو حکومت کی جانب سے اشیا خریداری روکنے کے بعد ملک بھر کے اسٹوروں پر اشیا کی شدید قلت کا سامنا ہے، ملک کے مختلف علاقوں کے اسٹورز پر چینی، آٹا، دالوں اور صابن سمیت متعدد اشیا کا اسٹاک ختم ہونے لگا ہے۔ ملک بھر کے اسٹورز پر اشیا کا اسٹاک 4 ارب روپے تک رہ گیا۔جو عام حالات میں 8 سے 10ارب تک ہوتا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اس وقت ملک بھر کے یوٹیلیٹی اسٹورز پر 3 سے 4 ارب تک کی انوینٹری موجود ہے جو عام حالات میں 8 سے 10 ارب روپے تک ہونی چاہیے تاکہ ہر قسم کی اشیا اسٹوروں پر موجود ہوں لیکن اس وقت راولپنڈی اسلام آباد سمیت ملک بھر میں کارپوریشن کے اسٹوروں پر اشیا کی قلت بڑھتی جا رہی ہے اور اسٹوروں پر صر ف سامنے اشیا کو ڈسپلے کے لیے لگایا جا رہا ہے جبکہ اسٹاک بالکل ختم ہو چکا ہے۔