Buy website traffic cheap

Latest Column, Hafiz Usman Ali Muawia , Hazrat Abu Bakr Siddique R.A

فلاحی ادارے رحمت یا زحمت

حمیدہ گُل محمد
فلاحی ادارے رحمت یا زحمت
أج جس مسئلے پر میں نے قلم اٹھایا ہے وہ ہے سما جی تنظمیں۔ہماری سماجی تنظمیں جو دن رات غریبوں،مسکینوں،ناداروں،یتیموں اور بے سہارا لوگوں کی مدد کے لئے کوشاں ہیں۔کیا کبھی ان تنظیمواں نے سوچابھی ہے کہ وہ جو کام کر رہی ہیں آیا وہ واقعی درست بھی ہے کہ نہیں؟اس وقت پاکستان میں ہزاروں کی تعداد میں سماجی و فلاحی ادارے لاتعداد فلاحی کام کر رہے ہیں جس میں تین وقت کا کھا نااور مہینے کے آخرمیں راشن مہیا کر نا ہے۔جگہ جگہ مختلف تنظیموں کے دستر خوا ن لگے ہوئے ہیں جہاں باعزت اور مہذب طریقے سے لوگوں کو کھانا کھلایا جاتا ہے جس میں حقدار،صاحب استطاعت،خواتین، بچے،بوڑھے،منشیات کے عادی افراد،درمیانہ طبقے اور خاص کر نوجوان طبقہ جو کسی بھی معاشرے کامستقبل ہوتے ہیں اپنے پیٹ کی آگ بجھاتے ہوئے دکھائی دیتے ہیں ان اداروں کے اس عمل سے معاشرے کا وہ نوجوان طبقہ جو کہ اپنے بل بوتے پرنہ صرف اپنا بلکہ اپنی فیملی کا بھی بوجھ اٹھا سکتا ہے وہ نکمہ،کام چور اور بے شرم ہوتا جا رہاہے جب بغیر پیسے اور محنت کے با آسانی کبھی بکرے کا سالن،کبھی مسور کا پلاؤ،کبھی بریانی اوردیگر ڈشیں آسانی سے مہیا کر دی جائیں گی تو پھر معاشرے کا یہ طبقہ کیسے محنت مزدوری میں دلچسپی لے گاسونے پہ سہاگہ یہ ہے کہ مہینے کے آخر میں راشن کا ایک بڑا سا تھیلا بھی دیا جاتا ہے جوکہ حقدار کے علاوہ صاحب استطاعت لوگ بھی لینے میں عار محسوس نہیں کرتے یہ معاشرے کے وہی لوگ ہیں جو کہتے ہیں دل مانگے مور۔خدارا فلاحی وسماجی اداروں سے میری التجا ہے کہ وہ فلاحی کاموں میں مکمل چھان بین کے بعد حقدار کو ہی اس کاحق دیں کیوں کہ ہمارے معاشرے میں چالباز اور لٹیرے لوگوں کی کمی نہیں جو مختلف طریقوں سے صاحب استطاعت ہونے کے باوجود خود کو حقدار ثابت کرتے ہیں۔