Buy website traffic cheap

حقیقی محسن

نئی حکومت ۔۔۔۔۔۔پرانا پاکستان

نئی حکومت ۔۔۔۔۔۔پرانا پاکستان
پرواز
نویداسلم
ایک پاکستانی غیر سیاسی مزاح نگار نے کہا ہے کہ ’’ اگر میں صدر بن گیا تو اسلام کی جیت ہوگی اور اگر میں ہار گیا تو 6ستمبر کو یوم دفاع نہیں مناؤں گا۔‘‘ ایک تو غیر سیاسی اور اوپر سے مزاح نگار اب کوئی شک تو رہ نہیں گیا ان کے صدر بننے میں۔۔۔۔ حکومت نئی ہے لیکن پاکستان اب بھی پرانا ہے ۔۔۔ تبدیلی کے بعد انصاف کے تقاضوں کو مدِ نظر رکھتے ہوئے آئندہ فیصلے وزیر اعلیٰ کے آفس میں ہونگے۔۔۔ یہاں مذہبی عقائدجشن آزادی نہ منانے کے باوجود صدر مملکت بننے کے لیے ایڑھی چوٹی کا زور لگا رہے ہیں۔ کیوں۔۔۔؟ انٹرمیڈیٹ کو گورنر بنایا گیا یہ ہے نئے پاکستان میں نوکریوں کا میرٹ ۔۔۔بُری ٹیم سے میچ جیتنے کی توقع کرنا خود کو خوش فہمیوں میں رکھنے کے مترادف ہے۔۔۔آپ مزید حکمرانوں کے سچ جاننے سے قبل رعایا پر بھی ایک نظر ڈالتے جائیے۔ ’’جیسی رعایا ویسے حکمران‘‘ یہ ایک اٹل حقیقت ہے ۔ یہ رعایا چاہتی ہے کہ ہم من مانیاں اپنی کریں مگر حکمران ہمارے عمر فاروقؓ جیسے ہونے چاہئیں۔ یہ ملک22کروڑ افراد پر مشتمل ہے جن میں چونسٹھ فیصد(64%)نوجوان ہیں جبکہ ٹوٹل آبادی میں سے پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن کی تازہ ترین رپورٹ جولائی2018ء کے مطابق پندرہ کروڑ پانچ لاکھ (150.5ملین)موبائل فون یوزرز ہیں۔ جن میں سے پانچ کروڑ پچپن لاکھ ستانوے ہزارسینتالیس (55,597,047)جاز ، چار کروڑ چونتیس لاکھ چھتیس ہزار چار سو پچپن (43,436,455)ٹیلی نار، تین کروڑ دس لاکھ اکیس ہزار دو سو چھ (31,021,206)زونگ، دوکروڑ چار لاکھ ننانوے ہزار پچھتر (20,499,075)یوفون کسٹمرز ہیں۔ جو کل ملا کر پندرہ کروڑ پانچ لاکھ تریپن ہزار ساتھ سو تراسی (150,553,783)بنتے ہیں جو روزانہ ایک روپیہ خرچ کریں تو ماہانہ ’’چار ارب اکاون کروڑ چھیاسٹھ لاکھ تیرہ ہزار چار سو نوے روپے ‘‘(Rs. 4,516,613,490/-)بنتے ہیں۔۔۔اس حساب سے یہ رقم دو ماہ میں’’نو ارب روپے‘‘ سے تجاوز کرتی ہے۔ جب کہ فنڈ فار ڈیم (Fund For Dam)کے لئے اب تک صرف ’’ایک ارب بہتر کروڑ چونتیس لاکھ اٹھاون ہزارروپے ‘‘ (1,723,458,157)جمع ہوئے ہیں جس کا 06-07-2018کو آغاز کیا گیا تھا تاکہ مستقبل میں پاکستان کو پانی کی کمی کا سامنا نہ کرنے پڑے مگر یہ رقم تو بہت مایوس کن ہے۔۔۔کیوں؟یہ ہے اِس قوم کی وطن سے محبت اور وہ دعوے جو یہ اپنے وطن سے پیار کرتے ہوئے کہتی ہے کہ ’’ہمیں پیار ہے پاکستان سے‘‘ اب ہم واپس حکمرانوں کے سچ کی طرف آتے ہیں۔
پرانے پاکستان میں میٹرک پاس صدر جبکہ نئے میں گورنر ہے مگر ایم ایس سی پاس اسی ملک میں کہیں پر ڈرائیور کے فرائض سر انجام دے رہا ہوگا ، یہ ہے تبدیلی اور نیا پاکستان۔۔۔ تیسری دنیا کے بیشتر ممالک میں حکومت کی ذمہ داری قبروں کو سونپی گئی ہے۔۔۔ نااہل وزیر اعظم کے فیصلے اہل رہیں گے جب کہ خود نا اہل۔۔۔ خود قرضے پہ قرضہ لیتے رہتے ہیں اور عوام کو بچت اسکیموں کی ترغیبیں دیتے ہیں۔۔۔ حادثات میں مرنے، جلنے والوں کے ورثا کو کروڑوں بانٹ دیں گے، مگر حادثات کی روک تھام، سزا جزا اور ایمر جنسی سے نمٹنے پر ٹکہ خرچ نہیں کریں۔۔۔ پاکستانی سیاسی پارٹیوں میں سے اگر ن لیگ سے نواز اور شہباز، پی ٹی آئی سے عمران اور پی پی سے بلاول کو نکال دیا جائے تو یہ پارٹیاں ختم ہو جاتی ہیں۔۔۔کھلاڑیوں کو کروڑوں روپے انعام دیتے ہیں مگر طلبہ کو اسکولوں میں کرسیاں بھی میسر نہیں ۔۔۔اگر وعدے بدلنے ، یوٹرن لینے، سمجھوتے کرنے، سارے ہتھکنڈے استعمال کرنے کے باوجود بھی تبدیلی نہ آئی تو پھر لخ دی’’۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‘‘ان سبھی پر جو اس گیم کے کھلاڑی اور حامی رہے۔۔۔خود زبان، قوم، ملک اور مذہب کے نام پر لڑتے اور مرتے رہتے ہیں مگر خوبصورت عورت پر سب کا اتفاق ہے چاہے کسی زبان، قوم، ملک اور مذہب کی ہو۔۔۔کرمنل اور ان پڑھ لوگ، ایم پی اے۔۔۔ایم این اے۔۔۔وزیر۔۔۔وزیر اعلیٰ۔۔۔وزیراعظم اور صد ر کے منصب پر آ کر پڑھے لکھے نوجوانوں کے لئے کلرکی اور پیلی ٹیکسیاں کے فیصلے کر سکتے ہیں۔۔۔جس کو سورت اخلاص نہیں آتی وہ وزیر داخلہ بن سکتا ہے اور جسے پورا قرآن حفظ ہے ، وہ دہشت گرد بن سکتا ہے۔۔۔سڑک پہلے بناتے ہیں پھر اسے کھود کر پانی، بجلی، گیس کی لائنیں بچھاتے ہیں۔۔۔اور اختتام سے قبل ایک مشورہ سیاستدانوں کے لئے، سبھی سیاستدانوں کو چاہیے کہ وہ ان واقعات کو قلم بند کروائیں جو انہوں نے دیکھے اور ایسا کرنے کے لئے جیل میں بیٹھ کر لکھنا ان کے لیے زیادہ مناسب رہے گا کیونکہ وہاں انہیں کوئی روکنے ٹوکنے والا نہیں ہوگا ، آپ اپنی آب بیتی ضرور لکھ کر جائیے گا تاکہ آئندہ آپ کے جونیئرز ان غلطیوں سے بچ سکیں جو آپ سے سر زد ہوئیں تھیں۔۔۔آخری پیغام میرے وہ جوشیلے قارئین ملاحظہ فرمائیں جو دوسروں کو بدلنا اپنا فرض عین سمجھتے ہیں آپ اگر خود کے ساتھ ایماندار ہوجائیں تو آپ کو دوسروں کو بدلنے کی ضرورت پیش نہیں آئے گی، آپ کے پاس اتنا وقت نہیں بچے گا کہ آپ پاکستان کو بدلیں لیکن آپ کچھ عرصہ بعد دیکھیں گے توپاکستان بدل چکا ہوگا۔