Buy website traffic cheap

Latest Column, Ali Raza Rana, Tassawar e Iqbal

ناقص بلدیاتی نظام

﴾تحریر: علی رضا رانا﴿

آسودہ حال معاشروں کا جائزہ لے تو واضح ہوتا ہے کہ ان ممالک کی ترقی کا راز بلدیاتی نظام پر منحصر ہے اختیارات کی تقسیم بد تریج یونین کونسلز کو منتقل کر دی گئی ہیں پولیس،صحت،تعلیم،روزگار،پینے کا صاف پانی کی غرض کہ عوام کی روزمرہ کی ضروریات اور سہولیات کا ہر شعبہ یونین کونسلز کے زیر سایہ کام کر تاہے اور یوں حکومتیں صیح معنوں میں عوام کی امنگوں کے مطابق فیصلہ کر تی ہیں اور نظام حکومت احسن طریقے سے چلاتی ہیں۔یہی وجہ ہے کہ عوام کا اعتماد حکومت پر 100% قائم رہتا ہے۔ پاکستان کی گزشتہ حکومتوں نے بلدیاتی نظام کو لپیٹ کر اپنے تخت کے نیچے دفن کیئے رکھا ہے۔پہلے تو بلدیاتی انتخابات نہ کروائے گئے اور جب سپریم کورٹ کے دبا¶ کے تحت انتخابات ہوئے تو منتخب کردہ نمائندوں کو بے آسرہ چھوڑے رکھا اور فنڈکے بجائے لارے چپے دیتے گئے چناچہ جیسے کہ پانی کی لائنیں،گلی محلوں میں نالی پکی کرانی ہو یا محلے میں سیورج کا کھڑا پانی نکلوانا ہو تو اپنے علاقے کے ایم پی اے،ایم این اے کو ڈھونڈے جو اسے انتخابات سے پہلے ملتا ہے وہ بھی اس وقت جب وہ فنڈ پر ہاتھ منہ صاف کر کے ڈکار لے چکا ہوتا ہے دنیا میں کہی چلے جائیں باعزت معاشروں میں ایسا نہیں ہوتا یہ ان نمائندوں کا کام اور ذمہ داری بھی ہے۔اگر پاکستان میں صیح طور پر بلدیاتی نظام رائج کر دیا جائے تو پاکستان کے ستر فیصد سے زائد مسائل ایک دو سال کے اندر ہی حل ہو سکتے ہیں لیکن جہموریت کے نام پر موروثی بادشاہت جوکہ پنجاب اور سندھ میں اب تک قائم و دائم ہے اس بادشاہی حکومت کے ہوتے نیا نظام عوام کی آنکھوں میں دھول جھوکنے کے سوا کچھ نہیں ہے۔بلدیاتی نظام کی اس خطے میں مختصر تاریخ کا جائزہ کچھ یوں ہے کہ سر سید احمد خان جب وائسرائے کونسل کے رکن نامزد ہوئے تو ان کی کوششوں سے انگریزوں نے یہاں کی عوام کی حکومت کو اصولن تسلیم کر لیا اور اس کی ابتداء1883 میں لوکل سلف گورئمنٹ ایکٹ کے نفاظ سے ہوئی تو برصغیر میں پہلی بار بلدیاتی نظام رائج ہوا اور لوگ حق راہی دہی کے جدید نظام سے روشناس ہوئے اگر تاریخ کا مطالعہ کیا جائے تو پاکستان میں بلدیاتی نظام 1912 کے قوانین کا تسلسل ہے، قیام پاکستان کے وقت کیونکہ مملکت خدا داد کا ابتدائی ڈھانچہ برطانوی ایکٹ 1935 کے تحت ہی رکھا گیا اور وقتی طور پر اس کے تحت نظام چلایا گیا تو 1959 میں پاکستان میں پہلی بار سیاسی مصلحتوں اور ضرورت کے تحت صدر ایوب خان نے نئے طرز کا نظام رائج کیا جسے 1962 کے آئین کے باب دوئم کے آرٹیکل 158 کے تحت الیکٹرول کالج میں تبدیل کر دیا گیا تاہم پاکستان میں یہ ادارے مخصوص شکل میں 1964 میں متعارف کرائے گئے اور بلدیاتی اداروں کو ترقیاتی کاموں میں شرکت کے مواقع مہیا کرنے کے علاوہ کچھ عدالتی اختیارات بھی تجویز کیئے گئے۔1972 میں ذوالفقار علی بھٹو نے نیا بلدیاتی قانون پیپلز گورنمنٹ آرڈینس جاری کیا جس کے تحت انتخابی حلقے کا کردار ختم کر کے اسے سماجی خدمات تک محدود کر دیا گیا ان کی حیثیت غیر نمایا رہی۔جنرل ضیاءالحق نے1979 میں پاکستان میں مقامی حکومتوں کا آرڈینس جاری کر کے انتخابات کروائے۔ اس کے بعد 1998 میں بھی بلدیاتی انتخابات کروائے گئے مگر بلدیاتی نظام کا جو سب سے کامیاب دور گزرا وہ جنرل پرویز مشرف کا تھا جس نے2001 سے 2005 میں یہ نظام مضبوط بنیادوں پر نا صرف استوار کیا بلکہ ناظمین کو مفاد عامہ اور انتظامی امور کے میدان میں لا محدود اختیارات سونپے گئے اور ناظمین کو بے شمار فنڈز بھی جاری کئے گئے جس کا خوبصر نتیجہ سابقہ کراچی،حیدرآباد اور دیگر اہم علاقوں کی حالات زار کو دیکھ کر اندازہ کیا جاسکتا ہے قیام پاکستان سے لے کر اب تک یہاں یا تو آمرانہ نظام قائم رہا یا جہموریت کے نام پر موروثیت قائم ہے لیکن ایک مشرف دور کے سوا کسی دور حکومت میں بلدیاتی نظام کو اس قدر فعال نا بنایا جاسکا،مگر اب دیکھے تو معلوم ہوتا ہے کہ ہم جدید شہر کے بجائے غیر سنجیدہ جنگل میں رہتے ہیں موجودہ ناقص بلدیاتی نظام عام آدمی کے لیے درد سر بن گیا ہے۔ تعلیم،صحت، صاف پانی، گٹر کی لائینیں،روزگار، بیوا¶ں کی امداد اور بنیادی سہولیات سمیت اہم مسائل جو ں کے توں ہیں بلدیاتی اداروں کی مدت ختم ہونے کے قریب ہے کچھ ہی وقت رہ گیا ہے مگر حیدرآباد سمیت کراچی،میرپور اور دیگر بڑے شہر دیکھیں تو معلوم ہوتا ہے کہ دور جنگل میں رہ رہے ہیں کیونکہ روڈ ٹوٹ پھوٹ گئے ہیں جا بجا گٹر ابل رہے ہیں صاف پانی کی جگہ گندا پانی پینے کو دیا جا رہا ہے پینے کا پانی خریدنا پڑ رہا ہے تاکہ صحت خراب نہ ہو جائے، میئر صاحبان بے بس نظر آتے ہیں اور نا اہل بھی، ٹھنڈے کمروں میں بیٹھ کر ٹائم پاس کیا جار ہے ہر یوسی اس وقت مسائل کا گڑ بن گئی ہے صوبائی حکومت اور وفاقی حکومت اس وقت اپنے مفادات میں مصروف عمل ہیں بلدیاتی نظام یا بلدیاتی نمائندوں پر ان کی کوئی توجہ مرکوز نہیں ہے،

یہ موجودہ بلدیاتی نظام ہے جو کہ 2016 تا 2020 جاری رہے کر ختم ہوچکا ہے، موجودہ اگست 2020 کی مون سون بارشوں نے حیدرآباد، کراچی، میرپور خاص سمیت دیگر اہم شہروں میں مکمل تباہی مچائی ہے، کئی اہم تجارتی و رہائشی علاقے تو پانی اور پھر گٹر کے ناقص سسٹم کے باعث تباہی کا منظر پیش کررہے تھے، کیونکہ حیدرآباد اور کراچی میں نہری اور نالوں کی ابتر حالت ہے، مختلف نالوں پر جگہ کو قبضہ کرکے رہائش قائم کی جاچکی ہے جس کے باعث بھی نالوں کی صفائی نا ہونے کے برابر ہے، پریشان حال عام اور سادہ عوام نے منتخب عوام نمائندوں اور صوبائی حکومت کی جانب دیکھا اور مشکل ترین وقت میں پکارا تو دونوں حکومتیں صرف باتوں اور دعووں تک محدود رہی، 18 ترمیم کے مطابق تمام صوبے آزاد ہیں اور خود مختار ہیں مگر بلدیاتی نظام آج بھی قید ہے، ایم کیو ایم پاکستان جس کے پاس سندھ کے دو بڑے شہروں کی میئر شب ہے یا یوں کہتے ہیں کہ 5 سال مکمل کرکے مددت ختم ہوچکی ہے، انکے اہم زرائع کہتے ہیں اور میڈیا پر بھی شور جاری رہتا ہے کہ پیپلزپارٹی سندھ حکومت فنڈ نہیں دیتی اور نہ میئر صاحبان کے پاس کوئی اختیار ہے، سب اختیار صوبائی حکومت کے پاس موجود ہے جس سے مقامی لوکل گورنمنٹ کی کارکردگی ناقص ہے یا کام نہیں ہوسکتا، اس طرح شہروں کی حالت خراب ہے، ماضی قریب ہی میں اختیار کا رونا میئر کراچی اور حیدرآباد میڈیا پر بیٹھ کر کھول کر کرتے رہے ہیں، عوام نے ووٹ آپ کو دیا تو سوال بھی آپ ہی سے ہوگا، صوبائی حکومت جتنی زمہ دار ہے اتنی ہی لوکل گورنمنٹ بھی زمہ دار ہے، کیونکہ 2001 میں جو کامیابی کے جھنڈے آپ نے بلدیات اور شہر کو سرسبز و شاداب کرنے میں گاڑے تھے وہ ہم عام اور سادہ عوام کو معلوم ہے آپ نے محنت کرکے وہ مقام حاصل کیا تھا، عمران حکومت ویسے تو کہتی ہے کہ آزاد اور خود مختار بلدیاتی نظام لائیں گے مگر ابتک سندھ میں مرکزی حکومت یہ نظام قائم نہیں کرسکی، مگر موجودہ مون سون بارشیں جو بلخصوص کراچی، حیدرآباد کو شدید متاثر کرگئی ہیں وہ تو کچھ نہیں کیونکہ پاکستان آرمی نے دن رات محنت کرکے حیدرآباد کراچی کے مختلف برسات سے متاثرہ علاقوں سے پانی کی نکاسی یقینی بنائی ہے جس پر مجھ سمیت ہر شہری انکا مشکور اور شکر گزار ہے، مگر اہم مسئلہ شہری علاقوں میں صوبائی و بلدیاتی سمیت مرکزی حکومت کی عدم توجہ کا ہے جس سے ترقی یافتہ شہر گاوں سے بھی بدتر حالت میں ہیں Info Structure سمیت نالوں اور گٹروں کی اثر نو تعمیر کی ضرورت ہے، عوام حکمران سے سوال کرتی ہے کہ اب کس منہ سے ووٹ مانگو گے، بہتر یہ ہے حکمران ٹھک انداز میں اپنی زمہ داری پوری کریں ورنہ مسائل مسئلستان نہ بن جائے، ہم چاہتے ہیں کہ ایسے حکمران ہوں جو عوام میں رہے نہ کہ AC کے ٹھنڈے ماحول میں رہے

آج بھی عوام 2001 میں قائم ہونے والے بلدیاتی نظام کو یاد کرتی ہے جہاں کام تو ہوا ہے کم سے کم، بلدیاتی چیئرمین،کونسلرز،میئرز تمام تر اس وقت مختلف گروپس میں تبدیل ہو گئے ہیں اس خراب ہوتی صورت حال میں صوبائی اور مرکزی حکومت کو بھی نقصان ہو سکتا ہے کیونکہ صوبائی حکومت بڑے شہری علاقوں جن میں کراچی حیدرآباد ہیں توجہ نہیں دیتی ہے اس طرح عوام شدید پریشانی میں مبتلا ہے بہتر ہے کہ عوامی مسائل پر نظر ثانی کریں او ر بلدیاتی نظام بہتر بنائیں جس سے عوامی رائے بہتر انداز میں قائم ہوسکے۔