Buy website traffic cheap


کرپٹ عناصر کی جانب سے ریکارڈکو نقصان پہنچائے جانے کا خدشہ، چیئرمین نیب نے متعلقہ حکام کو ہائی الرٹ رہنے کا حکم دیدیا

لاہور(ویب ڈیسک): قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس (ر) جاوید اقبال نے نیب ہیڈ کوارٹرز اور تمام ریجنل بیوروز میں سرکاری ریکارڈ کی حفاظت کو ہر صورت یقینی بنانے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ اس کا خاص خیال رکھا جائے کہ نیب کا سرکاری ریکارڈ صرف اور صرف سرکاری مقصد کے لئے نیب کے ہیڈ کوارٹرز اور تمام ریجنل بیوروز کی عمارت سے باہر جائے اور غیر متعلقہ نیب کے افراد اور غیر متعلقہ پرائیویٹ افراد کے ہاتھوں میں کسی صورت نہیں جانا چاہیے۔تفصیلات کے مطابق چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کی زیر صدارت نیب ہیڈ کوارٹرز میں ایک اجلاس منعقد ہوا۔اجلاس میں نیب ہیڈ کوارٹرز اور نیب کے تمام ریجنل بیوروز میں سرکاری ریکارڈ کی حفاظت ، افسران اور اہلکاروں کی سکیورٹی پالیسی کے تحت سکیورٹی اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔ چیئرمین نیب جاوید اقبال نے انٹیلی جنس اینڈ ویجلنس سیل کو ہدایت کی کہ نیب ہیڈ کوارٹرز اور نیب کے تمام علاقائی دفاتر میں سرکاری ریکارڈ کی حفاظت کو ہر صورت یقینی بنایا جائے اور اہم اور حساس دستاویزات کی سیکریسی کو نہ صرف یقینی بنایا جائے بلکہ نیب کوارٹرز اور نیب کے تمام ریجنل بیوروز میں سرکاری ریکارڈ کی حفاظت کے لئے نیب کا سرکاری ریکارڈ خسوصاً اہم مقدمات کا ریکارڈ کسی بھی صورت غیر متعلقہ افراد کے ہاتھوں میں نہیں پہنچنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ نیب ہیڈ کوارٹرز اور نیب کے تمام ریجنل بیوروز میں آنے اور جانے والے نیب کے افسران اور اہلکاروں اور درخواست دہندگان کی سکیورٹی اور حفاظت کو یقینی بنایا جائے اور اس کا خاص خیال رکھا جائے کہ نیب کا سرکاری ریکارڈ صرف اور صرف سرکاری مقصد کے لئے نیب کے ہیڈ کوارٹرز اور تمام ریجنل بیوروز کی عمارت سے باہر جائے اور غیر متعلقہ نیب کے افراد اور غیر متعلقہ پرائیویٹ افراد کے ہاتھوں میں کسی صورت نہیں جانا چاہیے۔ انہوں نے ہدایت کی کہ نیب کی تمام فائلوں اور مقدمات کا مناسب اندراج کرتے ہوئے ڈائری نمبر ، تاریخ اور وقت کا اندراج متعلقہ رجسٹر میں یقینی بنایا جائے۔ انہوں نے نیب ہیڈ کوارٹرز اور نیب کے تمام ریجنل بیوروز کے افسران ، اہلکاروں کی سکیورٹی ، سکیورٹی پالیسی کے تحت یقینی بنائی جائے۔ سکیورٹی ہدایت کی مبینہ خلاف ورزی کرنے والے خلاف پہلے ہی انکوائری جاری ہے۔