Buy website traffic cheap

The former CEO of Twitter came into the field against Modi's fascism

ٹوئٹر کے سابق سی ای او مودی کی فسطائیت کیخلاف میدان میں آگئے

نئی دہلی: بھارت میں پرنٹ اور میڈیا چینلز کے بعد اب سماجی رابطوں کے پلیٹ فارمز پر بھی مودی سرکار نے قدغن لگا دی۔مودی سرکار نے اپنی بڑھتی ہوئی عالمی غیر مقبولیت کو دیکھتے ہوئے نیوز چینلز کے بعد اب سوشل میڈیا پر بھی پابندی لگادی۔ بھارت میں مسلسل گرتی صحافتی آزادی اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر اقوامِ عالم میں شدید تشویش پایا جاتا ہے۔گزشتہ برس مودی کے خلاف ڈاکومنٹری نشر کرنے پربی بی سی کے دفاتر پر بھی چھاپے مارے گئے تھے۔ 2020 میں بھی ایمنسٹی انٹرنیشنل نے شدید حکومتی دباو¿ کے مدِ نظر بھارت میں کام بند کر دیا تھا۔ورلڈ پریس فریڈم انڈیکس کے مطابق بھارت 150ویں نمبر پر ہے اور مسلسل گراوٹ کا شکار ہے۔اس کے باوجود مودی سرکار نے ڈھٹائی کا مظاہرہ کرتے ہوئے ٹویٹر پر قدغنیں لگادیں۔ اس حوالے سے ٹوئٹر کے سابق سی ای او جیک ڈورسی نے چشم ک±شا انکشافات کیے ہیں۔جیک ڈورسی نے بتایا کہ مودی حکومت نے ’کسانوں کے ملک گیر احتجاج‘ کے دوران ٹویٹر کو بلیک آو¿ٹ کرنے اور تنقید کرنے والے صحافیوں کا گلا گھوٹنے کی کوشش بھی کی جاتی رہیں۔ٹوئٹر کے سابق سی ای او نے مزید بتایا کہ اگر مودی حکومت کے غیر قانونی اور ناجائز مطالبات نہ مانے جائیں تو سنگین نتائج بھگتنے کی دھمکیاں دی جاتیں۔ سروس کی بندش، دفاتر اور ملازمین کے گھروں پر چھاپے مارے گئے۔