Buy website traffic cheap

5 dacoits killed in police encounter in Karachi

کراچی میں پولیس مقابلے میں 5 ڈاکو ہلاک

کراچی: سرسید پولیس نے نارتھ کراچی سیکٹر الیون بی میں مبینہ مقابلے میں 5 ڈاکوﺅں کو ہلاک کر دیا جبکہ دو ڈاکو موقع سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔فرار ہونے والے ڈاکو بھاری مالیت کے طلائی زیورات اور نقدی اپنے ساتھ لے گئے ، متاثرہ بنگلے کے مالک کا کہنا تھا کہ 6 ڈاکو صبح چار بجے واردات کے لیے گھر میں داخل ہوئے تھے ، ساتواں ڈاکو باہر گاڑی میں بیٹھا رہا ، اہلخانہ پر تشدد کیے جانے کی آوازیں سن کے علاقہ مکینوں نے مددگار 15 کو اطلاع کر دی تھی ،علاقہ پولیس اور مددگار 15 کی بروقت کارروائی کے باعث 5 ڈاکو مارے گئے ، مارے جانے والے پانچوں ڈاکو افغانی بتائے جاتے ہیں۔سرسید پولیس نے بدھ کی صبح نارتھ کراچی سیکٹر الیون بی میں مقابلے میں 5 ڈاکوو?ں کو ہلاک کر دیا جبکہ دو ڈاکو موقع سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے ، ہلاک ہونے والے ڈاکوﺅں کی لاشیں چھیپا ایمبولینسوں کے ذریعے عباسی شہید اسپتال منتقل کی گئیں۔ایس ایس ایچ او سرسید سب انسپکٹر شاہد تاج نے ایکسپریس سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ مددگار 15 پر اطلاع ملی الیون بی بنگلہ نمبر 274 میں ڈاکو موجود ہیں جس پر وہ پولیس پارٹی کے ہمراہ موقع پر پہنچ گئے اور پورے علاقے خصوصاً اس گھر کا جس میں ڈاکو موجود تھے محاصرہ کر لیا ،مددگار 15 کی نفری نے بھی ان کا بھرپور ساتھ دیا ، وہ پولیس کے جوانوں کے ہمراہ دیوار پھلانگ کر بنگلے میں داخل ہوئے تو ڈاکو ﺅ ں نے فرار ہونے کی کوشش کے دوران پولیس پارٹی پر فائرنگ کر دی ، انہوں نے بنگلے کے سائیڈ گلی میں دو ڈاکوﺅں کی آہٹ سن کر دیوار کی آڑ لیکر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں دو ڈاکو وہیں پر مارے گئے جبکہ تین ڈاکو جو چھت پر چلے گئے تھے وہ چھلانگ لگا کر برابر والے بنگلے میں کود گئےمددگار 15 کی جوانوں نے چھت پر ڈاکووں کا تعاقب کیا اور تیسرے بنگلے کی چھت پر مزید دو ڈاکو مار گرائے جبکہ پانچواں ڈاکو عقبی گلی میں ایک بنگلے میں گھس گیا جہاں سرسید تھانے کی پولیس پہلے سے گھات لگائے بیٹھی تھی۔ پانچواں ڈاکو وہاں جوانوں کی جوابی فائرنگ سے مارا گیا ،ایس ایچ او کا کہنا ہے کہ شبہ ہے کہ ایک ڈاکو فرار ہوگیا ، ہلاک ہونے والے ڈاکوو?ں سے 3 نائن ایم ایم پستول اور گرل کاٹنے کے اوزار کا بیگ پولیس نے برآمد کر لیا ،پولیس کو شبہ ہے کہ مزید اسلحہ بھی ڈاکوو?ں کے پاس موجود تھا جو شبہ ہے کہ بھاگم دوڑی میں کہیں گر گیا جسے پولیس تلاش کر رہی ہے ، مارے جانے والے دو ڈاکوﺅں کی شناخت کر لی جن میں سے ایک پیر آباد کے علاقے کا جبکہ دوسرا جمشید کوارٹر کے علاقے کا رہائشی بتایا جاتا ہے۔ مارے جانے والے تین ڈاکوو¿ں کی شناخت عبداللہ ، پائندہ خان اور امان خان کے نام سے ہوئی۔بنگلے کے مالک انوار الحسن نے بتایا کہ ان کا گھر دو منزلہ ہے گراﺅنڈ فلور پر بڑے بھائی افتخار الحسن رہائش پذیر ہیں ، صبح تقریباً سوا4 بجے 6 ڈاکو بھائی افتخار الحسن کے گھر کی گرل اور کنڈیاں کاٹ کر اندر داخل ہوئےپھر انہوں نے دروازے پر دستک دی بھائی نے جیسے ہی دروازہ کھولا ڈاکو اسے دھکے دیتے ہوئے اندر داخل ہوگئے اور بھائی ، بھابھی اور بچوں اور میرے والد والدہ کو تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد رسیوں سے باندھ دیا اور الماریوں سے نقدی ، طلائی زیورات اور دیگر قیمتی سامان نکال کر ایک چادر میں پوٹلی کی طرح باندھ کر ایک ڈاکو باہر لے گیا جبکہ پانچ ڈاکو میری بھابھی کو یرغمال بنا کر اوپر میرے گھر ائے اور بھابھی کو آگے رکھ کر دروازے پر دستک دی جیسے ہی میں نے دروازہ کھولا ڈاکوﺅں نے مجھے ایک گھونسا مارا جس سے میں پلنگ پر جا گرا پانچوں ڈاکو میرے گھر میں داخل ہوگئے میرے اور میری بیوی کے شور مچانے پر ڈاکوﺅں نے ہم دونوں میاں بیوی اور بچوں کو بہیمانہ تشدد کا نشانہ بنایا ،انہوں نے بتایا کہ ہمارے چیخٰیں اتنی شدت سے تھیں کہ پڑوسیوں نے سن لیں اور انہوں نے مددگار 15 پولیس کو اطلاع کر دی پولیس نے بھی بروقت کارروائی کی جس سے پانچ ڈاکو تو مارے گئے ،متاثرہ شخص کے بڑے بھائی نے بتایا کہ انہوں نے اور پورے محلے والوں نے دیکھا کہ ایک ڈاکو ان کے بھائی کے گھر سے پوٹلی لے کر نکلا اور باہر کھڑی ایک کار میں پہلے سے ڈرائیونگ سیٹ پر موجود اپنے ساتھی کے ساتھ موقع سے فرار ہوگیا ،ان کا کہنا تھا کہ شبہ ہے کہ ڈاکوﺅں کے مزید ساتھی بھی علاقے میں موجود ہونگے تاہم پولیس کو دیکھ کر وہ قریب نہیں آئے دیگر محلے والوں کے ساتھ شامل ہوگئے تاہم علاقے کے گھروں پر لگے سی سی ٹی وی کیمروں کی فوٹیج کو بغور دیکھنے پر ہو سکتا ہے کہ مزید ملزمان دکھائی دے جائیں ، پولیس نے تمام بنگلوں میں لگے کیمروں کی فوٹیج حاصل کر لی ہیں اور تحقیقات کا اغاز کر دیا ہے۔