Buy website traffic cheap


کشمیریوں کو حق خودارادیت کے علاوہ کوئی آپشن قابل قبول نہیں،کشمیر سنٹر لاہور

لاہور:کشمیریوں کو حق خودارادیت کے علاوہ کوئی آپشن قابل قبول نہیں۔ یہ حق اقوام متحدہ، عالمی برادری اور خود بھارت نے بھی تسلیم کررکھا ہے اور کشمیری عوام کا بنیادی اور پیدائشی حق ہے۔بھارت نے 27اکتوبر1947ءکو کشمیر پر جابرانہ اور غاصبانہ تسلط جمایاجس کے خلاف کشمیری پون صدی سے جدوجہد رکھے ہیں ۔ان خیالات کا اظہار وزیراعظم آزادکشمیر کے مشیر سید نصیب اللہ گردیزی نے کشمیرسنٹر لاہور کے زیراہتمام پریس کلب کے باہر یوم سیاہ کے سلسلہ میں منعقدہ احتجاجی مظاہرہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ مظاہرے سے انچارج کشمیر سنٹر لاہور سردار ساجد محمود، رہنما مسلم لیگ ن غلام عباس میر،چیئرمین لاہور ڈویژن عبداللطیف چغتائی ، معروف بزنس مین رانا زاہد، چیئرمین مسلم کرسچن کمیونٹی پیر معین شاہ،، مرکزی نائب صدر تحریک انصاف آزادکشمیر ویلی راجہ امجدراٹھور، صدر لاہور ڈویژن تحریک انصاف آزادکشمیرجاویدڈار، امیر جماعت اسلامی آزادکشمیرلاہورخوشحال شاہین،صدر جمعیت اتحادالعلماءلاہور احسان اللہ تبسم، ممتاز دانشور ہمایوں زمان مرزا، لیبریونین رہنما عطار قاسم فاروقی، رہنماتحریک حریت کشمیرراجہ ابرار، چوہدری محمد صدیق، کونسلر حاجی اعجاز،آصف شاہ اور مقبول اعوان نے بھی خطاب کیا۔
سیدنصیب اللہ گردیزی نے کہا کہ کشمیرسنٹر لاہور کے پلیٹ فارم سے منعقدہونے والے مظاہرے میں مختلف سیاسی وسماجی جماعتوں کے رہنماﺅں اور کارکنوں کی شمولیت خوش آئند ہے ۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم پاکستان کشمیریوں کے سفیر ہیں ۔ انہیں چاہیے کہ وہ مقبوضہ کشمیر میں ڈیڑھ سال سے جاری کرفیو اور دیگر پابندیوں کو ہٹانے کے لیے بھارت پر دباﺅ ڈالے۔ انہوںنے مزید کہا کہ ہمیں اوآئی سی اور دیگر عرب ممالک پر زور دینا چاہیے کہ وہ بھارت کو تنبیہ کریں کہ وہ تین ماہ میں مقبوضہ کشمیر میں عائد پابندیاں تین ماہ میں ختم کرے ۔ بصورت دیگر عرب ممالک میں بھارت کی لیبرفورس کو واپس بھیجنے کی دھمکی دینی چاہیے۔ اس طرح بھارت مجبور ہوجائے گا۔ سردارساجد محمود نے کہا کہ کشمیریوں نے پون صدی تک اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا ہے اور وہ آزادی کے حصول کے لیے اب بھی کسی قسم کی قربانی سے گریز نہیں کریں گے۔ غلام عباس میر نے کہا کہ ہماری آخری منزل بھارت سے آزادی اور پاکستان کے ساتھ الحاق ہے۔ اس کے علاوہ ہمیں کوئی دوسری چیز قبول نہیں۔ ہمایوں زمان مرزا نے کہا کہ ہم پاکستانی قوم کے شکرگزار ہیں کہ وہ کشمیریوں کے ساتھ اظہاریکجہتی کرتے ہوئے آج کے دن کو یوم سیاہ کے طور پر منارہی ہے ۔ اس سے دنیا کو معلوم ہوجاناچاہیے کہ کشمیری اور پاکستانی یک قالب دوجان ہیں۔ جاوید ڈار نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے بھرپورکوششیں کررہے ہیں۔ ان شاءاللہ موجودہ دور حکومت میں ہی مسئلہ کشمیر حل ہوجائے گا ۔ عبداللطیف چغتائی نے کہا کہ کشمیری صرف اپنی آزادی ہی نہیں تکمیل پاکستان کی جنگ بھی لڑرہے ہیں۔ احسان اللہ تبسم نے کہا کہ ہم شہداءکے خون سے کسی صورت غداری نہیں کریں گے ۔ خوشحال شاہین نے کہا کہ کشمیریوںنے اپنے بچوں اور اپنے جوانوں کی جانیں اور خواتین نے اپنی عزتوں کی قربانی اس لیے دی ہے کہ وہ کشمیر کو بھارت کے غاصبانہ قبضے سے چھڑا کر آزادی حاصل کریں ۔راجہ ابرار نے کہا کہ ان شاءاللہ وہ دن دور نہیں جب کشمیری اپنے مشن میں کامیاب ہوں گے۔ بھارت نے اگر کشمیر پر اپنا قبضہ ختم نہ کیا تو وہ خود ٹوٹ کر بکھر جائے گا۔