Buy website traffic cheap


ایم کیو ایم کے رہنما عامر خان 17 سال بعد قتل کے مقدمے میں بری

کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک)ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما عامر خان کو 17 سال بعد قتل کے مقدمے میں بری کر دیا گیا۔

عامر خان اور ملزم طارق عرف باٹا نے قتل کے مقدمے میں اپنی سزا کے خلاف اپیل دائر کر رکھی تھی۔سندھ ہائیکورٹ میں قتل کیس میں رہنما ایم کیوایم عامرخان کی سزا کے خلاف اپیل پر17سال بعدفیصلہ سنا دیا گیا۔

عدالت نے عامر خان کی سزا بڑھانے کی سرکار کی درخواست مسترد کرتے ہوئے عامر خان سمیت دو ملزمان کو باعزت بری کر دیا اور ان کے خلاف سزا کو کالعدم قرار دے دیا۔یاد رہے کہ انسداد دہشتگردی کی عدالت نے قتل کے مقدمے میں عامرخان کو 10 برس اور ملزم طارق کو عمر قید کی سزا سنائی تھی۔

پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا تھاکہ ملزمان نے2003 میں این اے 254 میں ضمنی الیکشن کے موقع پر فائرنگ کی، فائرنگ سے متحدہ کے کارکن انعم عزیز اور محمد نعیم جاں بحق ہو گئے۔پولیس کے مطابق اس وقت عامر خان ایم کیوایم حقیقی کے جنرل سیکرٹری تھے۔

ملزم طارق 17 برس سے جیل میں اور عامر خان ضمانت پر رہا ہیں جب کہ پولیس نے مقدمے میں ملزم رائس عرف ٹوپی سمیت دو نامعلوم ملزمان کو مفرور قرار دیا تھا۔